آینۂ مدارس ڈاٹ کام

www.aaina-e-madaris.com

'مدارس اسلامیہ کی خدمت میں وقف'

مدارس اسلامیہ ہندوستان کے گوشے گو شے میں پھیلے ہوئے ہیں اور اپنی اپنی جگہ پر دینی خدمت کا جو کارنامہ وہ انجام دے رہے ہیں وہ اظہر من الشمس ہے۔ لیکن آج بھی ان مدارس کے بارے میںمکمل معلومات حاصل کر نا ایک عام آدمی کا ان کے احوال سے ، خدمات سے یا ضروریات سے واقف ہونا آسان نہیں ہے۔ ضرورت محسوس ہوتی ہے اور جب کسی علاقے  میں کسی بھی عنوان سے آدمی سفر کرتاہے تو متعلقین کم از کم علاقے کے مدارس کے بارے میں جب کچھ معلومات چاہتے ہیں تو خاموش رہنے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہوتا۔ جس کے دو نقصان ہوتے ہیں ایک تو یہ کہ غلط فہمی پیدا ہوتی ہے اور دوسرے ان مدارس کے وجودپر ہی سوالیہ نشان لگ جاتاہے۔

غلط فہمیوں کا نقصان یہ ہے کہ مستحق ہونے کے باوجود ان کے امداد کے دروازے تنگ ہوجاتے ہیں اورجو مدد انہیں پہنچنی چاہئے وہ نہیں مل پاتی۔ موجودہ وقت میں اس کے تدارک کی کئی صورتیں ہیں مگرسب سے بہتر اور مؤثر صورت یہ ہے کہ کسی ویب سائٹ پر جس کومتعارف کرایا جائے اور جس کی باقاعدہ تشہیر ہو تمام مدارس کا تعارف ، اغراض ومقاصد ، علاقہ وار ان کی خدمات کاجائزہ اور ان کی ضرورتوں کے احوال بیک نظر کے سامنے آجائیں ۔ یہ خیال ایک زمانہ سے ذہن میں پرورش پارہاتھا مگر عملی صورت میں اس کو شروع کرنا کارِ دارد تھا۔ مگر اب( آئینۂ مدارس ڈاٹ کام ) www.aaina-e-madaris.com)) جس کا منشاء ہے کہ تمام ہی مدارس ایک دوسرے سے مربوط ہوں، ان کے احوال اگرکوئی جاننا چاہے توسہل انداز میں اس کو وہ احوال مل جائیں ۔ اسی طور پر اگر مدارس کی یہ معلومات جمع کردی جائیں تو عامۃ المسلمین کو اپنی رقومات ان مدارس کو فراہم کرنے میں کسی ذہنی الجھن ، تکدریا خدشہ کا سامنا نہیں کرنا ہوگا۔ اس کے لئے ضرورت ہے کہ آپ اپنے ادارے ، مدرسے کے صحیح احوال ہمیں فراہم کریں تاکہ اس ویب سائٹ کے ذریعے لوگوں تک آپ کا پیغام پہنچے اور آپ تک انہیں پہنچنے میں کسی دشواری کا سامنا نہ کرناپڑے ۔ مدارس اسلامی کی ذاتی دلچپی اور اپنے کام کے تئیں ان کا اخلاص ہی ہمارے اس کام کو آگے بڑھاسکتاہے۔اس کی اہمیت کوسمجھیں اور اس نادر موقع س بھر پور استفادے کا ارادہ کریں۔ آپ سے گزارش ہے کہ اپنے ادارہ سے متعلق یہ تفصلات ایک صفحہ پر فراہم کریں اور اپنے ادارہ کی تصاویر بھی، جن کوہم اپنی ویب سائٹ پر شائع کرسکیں۔

(4)نام ادارہ(1)کب اور کس نے قائم کیا(2)تعلیم کہاتک ہے (3)تعداد طلبہ (5)تعداد اساتذہ وملازمین(6) سالانہ اخراجات کیاہیں (7)ادار ہ کسی مرکزی ادارہ سے ملحق ہے(8)آپ کی خدمات کیاہیں (9)آپ کی ضروریات کیاہیں(10)آپ کے علاقہ کے دینی وعلمی حالات ارد گرد کا ماحول کیاہے۔

نصر الٰہی ,ایڈیٹر آئینۂ مدارس ڈاٹ کام، دیوبند 9897388898.

تاثرات حضرت مولانامفتی احسان صاحب استاذ حدیث دارالعلوم (وقف) دیوبند

بسم اللہ الرحمن الرحیم

موجودہ زمانہ میڈیا سے وابستہ ہے، کو ئی واقعہ یا حادثہ رونماہونے کے بعد چند لمحے بھی نہیں گذرتے کے پوری دنیا اس کی تفصیلات اپنی آنکھ سے مشاہدہ کرلیتی ہے۔ الیکٹرانک میڈیا کے سہارے پوری دنیا ایک کوزہ میں سماگئی ہے۔ انٹر نیٹ اس وقت ذارائع ابلاغ کا بہترین ذریعہ ہے ۔آج انٹر نیٹ پر ہر چیز کو تلاش کیا جاسکتاہے ، مگر جب ہم مدارس اسلامیہ کو تلاش کرتے ہیں تو مایوسی کا سامنا کرنا پڑتاہے۔اسی کے پیش نظر ’’آئینہ مدارس ڈاٹ کام ‘‘ ww.aaina-e-madaris.com))  انٹرنیٹ پر مدارس اسلامیہ کی ایک ڈائریکٹری ترتیب دینے کے لئے کوشاں ہے ،جس سے ایک عام آدمی کاکسی بھی علاقہ کے مدارس سے ان کی خدمات سے ، ان کے حالات سے ، ان کا علاقہ اور ان کی ضروریات سے آگاہ ہونا بہت آسان ہوجائے گا۔ یقینی طور پر ’’آئینۂ مدارس ڈاٹ کام‘‘ کے ذریعہ ملک وبیرون ملک کے مدارس کی جو معلومات دستیاب ہو گی اس سے نہ صرف مدارس اسلامیہ مربوط ہوں گے بلکہ عوام کوضرورت مند مدارس تک پہنچنے میںبھی مدد ملے گی۔یقینا یہ ایک بہت بڑا کام ہوگا۔

مدارس اسلامیہ کے ذمہ داران وعہدیداران سے میری گزارش ہے کہ وہ ’’آئینۂ مدارس ڈاٹ کام‘‘ کو اپنے ادارہ کی تفصیلی معلومات مہیا کرائیں تاکہ پوری دنیا آپ کے کاز سے متعارف ہو سکے۔ اس کے لئے میں نصرا لٰہی صاحب کو مبارک باد پیش کرتاہوں اور دعا گو ہوں کہ اللہ تعالیٰ اس کارِ خیر کوقبول فرمائے۔(آمین)

مولانا مفتی( محمد احسان قاسمی )

مفتی واستاد دار العلوم دیوبند

تاثرات حضرت مولانا قاری ابو الحسن صاحب اعظمی سابق شیخ القرادارا لعلوم دیوبند

بسم اللہ الرحمن الرحیم

میں جناب نصر الٰہی صاحب کو ’’آئینۂ مدارس ڈاٹ کام‘‘ www.aaina-e-madaris.com))         کے قیام کے موقع پر مبارک باد پیش کرتا ہوں ۔اس ویب سائٹ کے ذریعہ عوام و خواص بڑی آسانی سے کسی بھی ادارہ کی سرگرمیوں سے، ان کے حالات سے، خدمات سے ، ضرویات سے اور اس ادارہ کی تصاویر سے روشناس ہو سکتے ہیں اورجب یہ تمام چیزیں انگریزی اور اردو زبانوں میںان کے سامنے ہوں گی تو ان کو آپ تک پہنچے میں بھی کوئی دشواری یاتردّدنہ ہوگا۔ اس سے ایک فائدہ یہ بھی ہوگاکہ جوافراد اپنے بچوں کو دینی تعلیم سے آراستہ کرنا چاہتے ہیں یا ادارہ کا مالی تعاون کرنا چاہتے ہیں وہ انتہائی سہولت کے ساتھ آپ سے رابطہ کر سکیں گے ۔

موجودہ وقت میں اس ویب سائٹ کا قیام نہایت ضروری ہے اس لئے میںذاتی طورپر نہ صرف اس کی تائید کرتا ہوں بلکہ مدارس اسلامیہ کے منتظمین سے اپنے ادارہ کی مکمل معلومات فراہم کرنے کی درخواست کرتاہوں۔

(ابو الحسن اعظمی)

(سابق)شیخ القرا ء دار العلوم دیوبند

یکم جنوری 2014